Bulleh Shah

بابا بلھے شاہ دا کلام پڑھو وی تے سنو وی ۔ایدھاں مزہ وی آندا اے تے تیاری وی ودھیا ہو جاندی اے ۔



بلھے شاہ پنجابی دے اک مشہور شاعر نے۔ بلھے شاہ ضلع قصور دے اک پنڈ پانڈو کے وچ سال 1680 وچ جمے۔ اونہاں سے پیو دا ناں شاہ محمد درویش سی۔ بلھے شاہ نوں اپنے ٹبر وچوں اپنی بھین نال بڑا پیار سی۔ بلھے شاہ نے ابتدائی تعلیم اپنے پیو کولوں حاصل کیتی تے جہدے مگروں اگے ودھ پڑھن خاطر اونھاں نوں قصور گھلیا گیا جتھے اونہاں دے استاد غلام مرتضی تے محی الدین سن۔ شاہ عنایات بلھے شاہ دے مرشد کامل سن۔ آپ1785ء وچ فوت ھوۓ۔

سیاسی حالات

بلہے شاہ دے کلام وچ اونہاں دے ویلے دے سیاسی حلات وی اپنا رنگ وکھاندے نیں
اورنگ زیب دے مرن توں بعد مغلاں دی حکومت دا ویلہ آندا وے۔ مرکزی حکومت مُکن توں بعد دیس چ ہر پاسےلڑائیاں تے چگڑے ہندے پئے نیں۔ گل اخیر کے پنجاب چ بے تفاقی پے گئی تے فساد شروع ھو گئے۔ ایس ساری گل دی خبر اوس ویلے دے جرنیل فوجی نادر شاہ نوں وی ھو گئی۔ تے اوہدے منہ چ پانی آگیا۔ آخر کار نادر شاہ نے 1739ءچ دلّی اُتے حملہ کردِتاتے بڑا خون خرابا کیتا۔ ھجے لوکی ایس گل نوں نہ بھلے سی کہ 1761ءچ نادر شاہ دے جانشیں احمد شاہ ابدالی نیں پنجاب اُتے حملہ کر دِتا تے پہلے توں ودھ ظلم ثے خون خرابہ کیتا۔ احمد شاہ ابدالی دے ظلم نیں دلّی نوں اُجاڑ کے رکھ دتا۔ سارا نظام تباہ ھو گیا تے خانہ جنگی دی صورت حال پیدا ھو گئی۔ ایس موقعے تے بلھے شاہ آکھدے نیں:

"در کھلا حشر عذاب دا برا حال ھویا پنجاب دا"






بلھے شاہ مغلیہ سلطنت کے عالمگیری عہد کی روح کے خلاف رد عمل کانمایاں ترین مظہر ہیں۔ ان کا تعلق صوفیائ کے قادر یہ مکتبہ فکر سے تھا۔ ان کی ذہنی نشوونما میں قادریہ کے علاوہ شطاریہ فکر نے بھی نمایاں کردار ادا کیا تھا۔ اسی لئے ان کی شاعری کے باغیانہ فکر کی بعض بنیادی خصوصیات شطاریوں سے مستعار ہیں۔ ایک بزرگ شیخ عنایت اللہ قصوری، محمد علی رضا شطاری کے مرید تھے۔ صوفیانہ مسائل پر گہری نظر رکھتے تھے اور قادریہ سلسلے سے بھی بیعت تھے اس لئے ان کی ذات میں یہ دونوں سلسلے مل کر ایک نئی ترکیب کا موجب بنے۔ بلھے شاہ انہی شاہ عنایت کے مرید تھے۔

بلھے شاہ کا اصل نام عبد اللہ شاہ تھا۔ ۱۹۸۰ئ میں مغلیہ راج کے عروج میں اوچ گیلانیاں میں پیدا ہو ئے۔ کچھ عرصہ یہاں رہنے کے بعد قصور کے قریب پانڈو میں منتقل ہو گئے۔ ابتدائی تعلیم یہیں حاصل کی۔ قرآن ناظرہ کے علاوہ گلستان بوستان بھی پڑھی اور منطق ، نحو، معانی، کنز قدوری ،شرح وقایہ ، سبقائ اور بحراطبواة بھی پڑھا۔ شطاریہ خیالات سے بھی مستفید ہو ئے۔ مرشد کی حیثیت سے شاہ عنایت کے ساتھ ان کا جنون آمیز رشتہ ان کی مابعد الطبیعات سے پیدا ہوا تھا۔ وہ پکے وحدت الو جودی تھے، اس لئے ہر شے کو مظہر خدا جانتے تھے۔ مرشد کے لئے انسان کامل کا درجہ رکھتے تھے۔مصلحت اندیشی اور مطابقت پذیری کبھی بھی ان کی ذات کا حصہ نہ بن سکی۔ ظاہر پسندی پر تنقید و طنز ہمہ وقت ان کی شاعری کا پسندیدہ جزو رہی۔ ان کی شاعری میں شرع اور عشق ہمیشہ متصادم نظر آتے ہیں اور ان کی ہمدردیاں ہمیشہ عشق کے ساتھ ہوتی ہیں۔ ان کے کام میں عشق ایک ایسی زبردست قوت بن کر سامنے آتا ہے جس کے آگے شرع بند نہیں باندھ سکتی۔

اپنی شاعری میں وہ مذہبی ضابطوں پر ہی تنقید نہیں کرتے بلکہ ترکِ دنیا کی مذمت بھی کرتے ہیں اور محض علم کے جمع کر نے کو وبالِ جان قرار دیتے ہیں۔ علم کی مخالفت اصل میں” علم بغیر عمل“ کی مخالفت ہے۔ اگر بنظر غائر دیکھا جائے تو احساس ہوتا ہے کہ بلھے شاہ کی شاعری عالمگیری عقیدہ پرستی کے خلاف رد عمل ہے۔ ان کی زندگی کا بیشتر حصہ چونکہ لاقانونیت، خانہ جنگی، انتشار اور افغان طالع آزماوں کی وحشیانہ مہموں میں بسر ہوا تھا، اس لئے اس کا گہرا اثر ان کے افکار پر بھی پڑا۔ ان کی شاعری میں صلح کل، انسان دوستی، اور عالم گیر محبت کا جود رس ملتا ہے ،وہ اسی معروضی صورت حال کے خلاف رد عمل ہے۔
بلھے شاہ کا انتقال ۱۷۵۸ئ میں قصور میں ہوا اور یہیں دفن ہوئے۔ ان کے مزار پر آج تک عقیدت مند ہر سال ان کی صوفیانہ شاعری کی عظمت کے گن گا کر انہیں خراج عقیدت پیش کرتے ہیں۔






ہن انہاں دے کلام نوں سندے آں ۔کلام دی گہرائ بندے نوں کسے ہور ہی جہاں دی سیر کرا دیندی اے ۔




وحدت الوجود دے نظریے دا پرچار کردے بلھے دے کلام دی معراج ویکھو ۔ ۔کیویں او خود نوں محبوب دی ذات وچ سمو لیندے نیں ۔۔ ۔ ۔